hedayatgar.ir

فهرست مطالب- تاریخ اسلام
لشکر اسلام و لشکر کفار آمنے سامنے
حضرت پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات  (۱۲)

لشکر اسلام و لشکر کفار آمنے سامنے

سات شوال سن تین ہجری قمری کی صبح تھی لشکر اسلام کی فوج کفار قریش کی فوج کے مقابلے میں صف بستہ آمادہ جنگ تھی لشکر اسلام نے اپنی چھاؤنی کے لئے ایسا مقام منتخب کیا تھا کہ پشت کی جانب سے ایک بہترین رکاوٹ یعنی کوہ احد تھا۔
قریش کی سازشوں سے پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کو آگاہ کرنا
حضرت پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات ( ۱۱)

قریش کی سازشوں سے پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کو آگاہ کرنا

پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے چچا حضرت عباس علیہ السلام نے ایک خفیہ رپورٹ اپنی مہر اور دستخط کے ساتھ پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی خدمت میں روانہ کیا جس میں قریش کے منصوبوں اور سازشوں سے آگاہ کیا تھا جس وقت قاصد یہ نامہ لے کر پہنچا اس وقت آپ مدینہ منورہ کے باہر ایک باغ میں تشریف فرما تھے۔
پیغمبر اسلام مدینہ منورہ میں
حضرت پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات  (۱۰)

پیغمبر اسلام مدینہ منورہ میں

میدان احد کا منظرراہ حق میں دی جانے والی قربانیوں اور جانثاریوں کا ایک نہایت ہی خوبصورت میدان اور عفو و بخشش اور حقیقت و ایثار کا بہترین مرکز ہے ،اس جنگ میں مسلمانوں کے سبق آموز واقعات نہایت ہی حیرت انگيزاورانسان کو اپنی جانب مجذوب کرنے والے ہیں
جنگ بدر
حضرت پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات  (۹)

جنگ بدر

جب سے رسول خدا صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم مدینہ منورہ تشریف لائے تھے اسی وقت سے سرداران قریش، مکہ مکرمہ کے عوام ، جزیرۃ العرب میں رہنے والے یہودیوں اور منافقین نے آپ کی مخالفت کرنا شروع کردیا تھا۔
قبا کے علاقے میں داخل ہونا
حضرت پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات  (۸)

قبا کے علاقے میں داخل ہونا

" قبا " یثرب سے دو فرسخ کی دوری پر قبیلہ بنی عوف کا مرکز ہے ، پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اور آپ کے ساتھ آنے والے ربیع الاول کی بارہویں تاریخ کو دوشنبہ کے دن اس سرزمین پر پہنچے اور قبیلہ کے بزرگ کے گھر کے پاس اپنی سواریوں سے اترے دوسری جانب مہاجر و انصار کے بہت سے گروہ پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا انتظار کررہے تھے۔
پیغمبر اسلام (ص) کی ہجرت
حضرت پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات  (۷)

پیغمبر اسلام (ص) کی ہجرت

ماہ ربیع الاول بعثت کے تیرہویں برس میں سرداران قریش کہ جو مسلمانوں کے یثرب کی جانب ہجرت کرنے سے بہت زيادہ خوف و ہراس میں مبتلا تھے "دارالندوہ " نامی مقام پر کہ جہاں اپنی مشکلات و پریشانیوں کے حل کے لئے ہمیشہ اکھٹا ہوتے تھے جمع ہوئے اور یثرب کی جانب مسلمانوں کے جوق در جوق ہجرت کرنے
حج کے زمانے میں قریش کے سرداروں کو دعوت
حضرت پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات  (۶)

حج کے زمانے میں قریش کے سرداروں کو دعوت

مکہ مکرمہ کے عوام بلکہ جزیزہ عرب کے تمام عرب حج کے زمانے میں حضرت ابراہیم علیہ السلام کی تعلیمات کے مطابق کہ جو ان کے درمیان باقی تھیں حج کو اپنے آباؤواجداد کی باقیماندہ سنت کے عنوان سے بجا لاتے تھے.
طائف کی جانب سفر
حضرت پیغمبر اسلام(ص) کی سوانح حیات (۵)

طائف کی جانب سفر

بعثت کے گیارہویں سال کے آغاز سے ہی آنحضرت صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی زندگی میں بے انتہا غم و الم کے پہاڑ ٹوٹنے لگے اور قریش کے سرداروں کی جانب سے ہونے والے کینوں اور عداوتوں سے تکلیفیں پہنچانا شروع کردیں ہر وقت خطرات کے بادل آپ پر منڈلاتے رہے اور تبلیغ دن کے ہر طرح کے امکانات و وسائل کو آپ سے سلب کرلیا گیا تھا ۔
اعلانیہ تبلیغ
حضرت پیغمبر اسلام(ص) کی سوانح حیات (۴)

اعلانیہ تبلیغ

آنحضرت صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے اپنے رشتہ داروں کو دین اسلام کی دعوت دینے کے بعد عرب کے سارے قبیلوں تک اپنے پیغام کو پہنچانے کےلئے اعلانیہ تبلیغ کا  اہتمام کیا اور تمام لوگوں کو توحید و یکتا پرستی کی دعوت دی.
آغاز وحی
حضرت پیغمبر اسلام(ص) کی سوانح حیات (۳)

آغاز وحی

ایک دن پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم حسب معمول پروردگارعالم کی عبادت میں مصروف تھے کہ فرشتہ وحی حضرت جبرئیل امین قرآن کریم کی بتدائی آیتیں لے کر نازل ہوئے، یہ آیتیں سورہ علق کی پانچ ابتدائی آيتیں ہیں،یہ وہی فرشتہ وحی ہیں جو ایک مخصوص شکل میں ظاہرہوئے اور کہا
حضرت ابوطالب (ع) کی سرپرستی
حضرت پیغمبر اسلام(ص) کی سوانح حیات (۲)

حضرت ابوطالب (ع) کی سرپرستی

"میرا بھتیجا محمد بن عبداللہ قریش کے تمام لوگوں سے افضل و برتر ہے اگر چہ مال و ثروت سے محروم ہے کیونکہ دولت و ثروت ایک ایسا سایہ ہے جو ختم ہونے والا ہے جب کہ اصل و نسب ہمیشہ باقی رہنے والا ہے۔ "
پیغمبر اسلام ولادت سے ہجرت تک
حضرت پیغمبر اسلام(ص) کی سوانح حیات (۱)

پیغمبر اسلام ولادت سے ہجرت تک

یہ مسلم حقیقت ہے کہ جناب عدنان تک  پیغمبر اسلام کی نسبت بالکل اسی ترتیب سے ہے لیکن جناب عدنان سے حضرت اسماعیل علیہ السلام تک  ترتیب اور نام کے اعتبار سے اختلاف پایا جاتا ہے۔