پیغمبر اسلام (ص) کی زندگی

پیغمبر اسلام کی زںدگی کے آخری لمحات
پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 30)

پیغمبر اسلام کی زںدگی کے آخری لمحات

" پورے مدنیہ منورہ پر اضطراب و بے چینی کی فضا چھائی ہوئی تھی گھر کے اندر سے جو خبریں باہر آرہی تھیں وہ نہایت ہی رنج و الم سے بھری ہوئی تھیں، آنحضرت صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے بعض عقیدت مندوں کی یہ آرزو تھی کہ اے کاش اپنے رہبرو پیشوا کی قریب سے زيارت کرتے۔
اسامہ کی فوج
سلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 29)

اسامہ کی فوج

پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی عمرمبارک کے آخری ایام تھے اور آپ روم کی حکومت کی جانب سے اسلامی حکومت پر احتمالی خطرے کا احساس کررہے تھے لہذا آپ نے مہاجرو انصار کے افراد سے ایک منظم فوج تیار کی جس میں سرفہرست ابوبکر،عمر، ابو عبیدہ اور سعد بن وقاص جیسے لوگ شریک تھے۔
واقعہ غدیر
پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 28)

واقعہ غدیر

حج کے مناسک اختتام پذير ہوئے تمام مسلمانوں نے پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے ہمراہ مکہ مکرمہ سے اپنے اپنے شہر و دیار کی طرف کوچ کیا، مدینہ منورہ کے رہنے والے اس قافلے کے ہمراہ مدینے کی سمت روانہ ہوئے جس میں پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم موجود تھے۔
پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 27)

حجۃ الوداع

پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے چھبیس ذیقعدہ کو مدینہ منورہ میں ابو دجانہ کو اپنا جانشین معین فرمایا اور ایسی حالت میں جب کہ پہلے سے ہی ساٹھ قربانی کے جانوراپنے ہمراہ لئے ہوئے تھے مکہ مکرمہ کی جانب روانہ ہوگئے اور مسجد شجرہ میں احرام پہننے کے بعد مکہ کی جانب روانہ ہوئے ۔
پیغمبر اسلام اپنے بیٹے کے سوگ میں
پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 26)

پیغمبر اسلام اپنے بیٹے کے سوگ میں

پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے چھٹیں ہجری میں دوسرے ملکوں میں اپنے سفیر روانہ کئے اور ایک خط آپ نے مصر کے حاکم کو بھی لکھا اور اسے آئین توحید کی دعوت دی اس نے اگر چہ پیغمبر اسلام کی دعوت کو قبول نہیں کیا لیکن آپ کے خط کے احترام میں بہت سے تحائف کے ساتھ ایک کنیز بنام ماریہ کو بھی روانہ کیا ۔
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی رحلت
پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 25)

پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی رحلت

پورے مدنیہ منورہ پر اضطراب و بے چینی کی فضا چھائی ہوئی تھی گھر کے اندر سے جو خبریں باہر آرہی تھیں وہ نہایت ہی رنج و الم سے بھری ہوئی تھیں، آنحضرت صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے بعض عقیدت مندوں کی یہ آرزو تھی کہ اے کاش اپنے رہبرو پیشوا کی قریب سے زيارت کرتے لیکن پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی جسمانی کیفیت اس بات کی اجازت نہیں دے رہی تھی کہ لوگ اندر جاتے اور جس حجرے میں آنحضرت موجود تھے وہاں سوائے اہل بیت علیہم السلام کے کسی کو آمد ورفت کی اجازت نہیں تھی۔
غزوہ طائف
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 24)

غزوہ طائف

قبیلہ ثقیف کہ جو عرب کا ایک طاقتور قبیلہ شمارہوتا ہے اوروہاں کے لوگ شہر طائف میں زندگی بسرکرتے تھے ایک ایسا شہر کہ جس کی فضا بہت ہی لطیف اور اس میں سرسبز کجھور کے درخت اور باغات ہیں، قبیلہ ثقیف کے افراد وہ تھے جنہوں جنگ حنین میں اسلام کے خلاف شرکت کی تھی اور بہت بری طرح شکست کھانے کے بعد اپنے شہر کہ جس کے قلعے بہت ہی مستحکم اور بلند و بالا تھے پناہ لیا تھا
عام معافی کا اعلان
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 23)

عام معافی کا اعلان

پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے عام معافی کا اعلان اس طرح فرمایا: تم لوگ ہمارے نہایت ہی غیرمعقول ہم وطن تھے، تم لوگوں نے ہماری رسالت کو جھٹلایا اور مجھے خود میرے گھر سے باہر نکال دیا اور بہت ہی دور دراز کے علاقے کہ جہاں میں نے پناہ لی تھی مجھ سے جنگ کرنےکے لئے آمادہ ہوئے لیکن تمہارے ان تمام جرائم کے باوجود ہم نے تمہیں معاف کردیا اور تمہیں غلامی کی زندگی سے آزاد کررہا ہوں اور اعلان کرتا ہوں کہ " اِذْهَبُوا فَاَنْتُمُ الطُّلَقاءُ " جاؤ تم لوگ اپنے اپنے اعتبار سے زندگی بسر کرو آج سے تم سب آزاد ہو
ابو سفیان، پیغمبر کی خدمت میں
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 22)

ابو سفیان، پیغمبر کی خدمت میں

حضرت عباس بن عبدالمطلب پیغبمراسلام کے حکم کے مطابق صبح سویرے ابوسفیان کو پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی خدمت میں لے کرحاضر ہوئے اس وقت مہاجر و انصار کے بہت سے افراد پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے ارد گرد بیٹھے ہوئے تھے۔
فتح مکہ سے غزوہ طائف تک
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 21)

فتح مکہ سے غزوہ طائف تک

اس سے پہلے کہ ابوسفیان مکہ مکرمہ واپس پہنچتا پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے ابن عباس کو حکم دیا کہ اسے درہ کے پاس ہی روکے رکھو تاکہ اسلام کی نئی نئی فوج اپنی پوری تیاریوں کے ساتھ ان سے مقابلے کے لئے آمادہ ہوجائے۔
جنگ موتہ
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 20)

جنگ موتہ

آٹھویں ہجری کے آغاز میں کہ جب حجاز کے زيادہ تر علاقوں میں امن و سکون کی فضا قائم ہوچکی تھی پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم شام کے قریب کی سرحدوں پر رہنے والوں کو اسلام کی دعوت دینے کے بارے میں غور وفکرکرنے لگے اور ان افراد کے قلوب کہ جو ان دنوں قیصر روم کے زیر تسلط زندگی بسر کررہے تھے انہیں اسلام کی دعوت دیں۔
واقعہ فدک
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 19)

واقعہ فدک

فدک ایک زرخیز اور آباد سرزمین ہے جو خیبر کے قریب اور مدینہ منورہ سے ایک سوچالیس کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے اور قلعہ خیبر کے بعد حجاز کے یہودیوں کا علاقہ شروع ہوتا ہے۔
خطرہ کا اڈہ  یا قلعہ خیبر
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 18)

خطرہ کا اڈہ یا قلعہ خیبر

خیبر میں رہنے والے یہودی ہمیشہ اس بات کی کوشش میں لگے رہتے تھے کہ عرب کے قبیلے والوں کو اسلامی حکومت ختم کی ترغیب و تشویق دلائیں مثال کے طور پر ایک جگہ پرمشترکہ فوج کو سعودی عرب کے مختلف مقامات پرروانہ کیا اور یہودیوں کی مالی مدد سے ان لوگوں کو مدینہ منورہ پہنچایا اورجنگ احزاب چھیڑ دی۔
قریش کا صلح نامہ کی دوسری شق کو حذف کرنے پر اصرار
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات(درسنامہ 17)

قریش کا صلح نامہ کی دوسری شق کو حذف کرنے پر اصرار

کچھ ہی عرصہ گذرا تھا کہ تلخ واقعات نے قریش کو اس بات پر اکسایا کہ پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے درخوات کریں کہ صلح نامہ کی دوسری شق کو حذف کردیں وہی شق جس نے پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے صحابیوں کو غضبناک کردیا تھا۔
مشہور مورخ ابن ابی الحدید کا بیان
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (درسنامہ 16)

مشہور مورخ ابن ابی الحدید کا بیان

تاریخ اسلام کے عظیم مورخ ابن ابی الحدید معتزلی کہتے ہیں کہ میرے تاریخ کے استاد جب بھی اس واقعہ کے بارے میں گفتگو اور تفصیل سے روشنی ڈالتے تھے تو اس طرح کہتے تھے: اصل میں عمرو بن عبدود حضرت علی بن ابی طالب سے جنگ کرنے میں خوف محسوس کررہا تھا کیونکہ وہ جنگ بدر اور جنگ احد میں موجود تھا اور حضرت علی علیہ السلام کی شجاعت و بہادری کو بہت ہی قریب سے مشاہدہ کیا تھا اس بناء پر وہ حضرت علی علیہ السلام سے جنگ نہیں کرنا چاہتا تھا۔
جنگ خندق سے جنگ موتہ تک
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (15)

جنگ خندق سے جنگ موتہ تک

یہودیوں کے بعض  قبیلوں کے سردار کہ جو مدینہ منورہ کےعوام کے اسلام قبول کرنے اور پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی آمد کے بعد  مدینہ منورہ کو ترک کرکے قلعہ خیبر میں پناہ لے لیا تھا، اسلام کو ختم کرنے کے لئے ایک منصوبہ بند سازش رچی اورمسلمانوں کو مختلف گروہوں کے روبرو کردیا جو تاریخ عرب میں ایک بے نظیر واقعہ تھا
بے مثال اور بہادر خواتین
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (14)

بے مثال اور بہادر خواتین

مدینہ منورہ میں یہ خبرعام ہوگئی کہ جنگ احد میں پیمغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم قتل کردیئے گئے، پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے اعزہ واقرباء اس خبر کی حقیقت جاننے کے لئے احد کی جانب روانہ ہوگئے
جناب ابودجانہ اور پیغمبراسلام کا دفاع  
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات  (13)

جناب ابودجانہ اور پیغمبراسلام کا دفاع  

"حضرت علی علیہ السلام کے بعد جس نے اس جنگ میں پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے وجود نازنین کا مکمل دفاع کیا وہ عظیم شخصیت جناب ابودجانہ کی تھی انہوں نے خود کو پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا سپر قرار دیا اور دشمن کی جانب سے آنے والے تیر آپ کی پشت میں پیوست ہوتے رہے۔"
لشکر اسلام و لشکر کفار آمنے سامنے
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات  (12)

لشکر اسلام و لشکر کفار آمنے سامنے

سات شوال سن تین ہجری قمری کی صبح تھی لشکر اسلام کی فوج کفار قریش کی فوج کے مقابلے میں صف بستہ آمادہ جنگ تھی لشکر اسلام نے اپنی چھاؤنی کے لئے ایسا مقام منتخب کیا تھا کہ پشت کی جانب سے ایک بہترین رکاوٹ یعنی کوہ احد تھا۔
قریش کی سازشوں سے پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کو آگاہ کرنا
پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سوانح حیات (11)

قریش کی سازشوں سے پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کو آگاہ کرنا

پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے چچا حضرت عباس علیہ السلام نے ایک خفیہ رپورٹ اپنی مہر اور دستخط کے ساتھ پیغمبراسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی خدمت میں روانہ کیا جس میں قریش کے منصوبوں اور سازشوں سے آگاہ کیا تھا جس وقت قاصد یہ نامہ لے کر پہنچا اس وقت آپ مدینہ منورہ کے باہر ایک باغ میں تشریف فرما تھے۔